Home / Home / قسط ٤

قسط ٤

“حمزہ یہ لو موباٸل ۔۔اس کا نمبر تقریبا ہر ایک کے پاس ہے ۔رابطہ رکھنے کے لیے صحیح ہے “۔…. اسجد قریشی نے فون حمزہ کے حوالے کرتے ہوۓ کہا ۔ ۔
“بہت شکریہ ابو”۔۔۔حمزہ نے مسکراتے ہوۓ کہا .
“یہ سب کا ہے اچھا ۔ سب کو استعمال کرنے دینا” ….. اسجد قریشی نے مسکراتے ہوۓ کہا۔
“جی ۔۔جی ابو!”۔۔۔حمزہ نے کہا ۔۔حمزہ فون سب کو باری باری دیکھانے لگا ۔
“بیٹے کچھ عرصے تک میں سب کو فون لے دوں گا” ۔ اسجد صاحب نے باقیوں کو تسلی دی ۔ سبھی جانتے تھے کہ یہاں دو وقت کی روٹی مشکل سے پوری ہوتی تھی ۔ایک موباٸل فون بھی نہ جانے کیسے خریدا گیا ہو ۔
یہ نمبر تقریبا سبھی نے اپنے جاننے والوں کو دے دیا تھا۔ ۔۔۔۔کالج کا تیسرا سال شروع ہو چکا تھا ۔
ارسہ اور عاٸشہ  دونوں ہی جماعت میں نمایاں تھیں ۔
“عاٸشہ مجھے آپ سے کچھ مددچاہیے”….۔۔عاٸزہ ،ان سے ایک جماعت پیچھے تھی ۔ اس کا شمار جماعت کی ماڈرن ترین اور قدرے بگڑی ہوٸی لڑکیوں میں ہوتا تھا۔ ارسہ اور عاٸشہ کالج کے گرإونڈ میں بیٹھ کے نوٹس بنا رہی تھیں جب وہ ان کے پاس چلی آٸی تھی ۔




“کیا مدد چاہیے” ۔ عاٸشہ نے حیرانی سے مختصرا پوچھا۔
“یار! ۔مجھے آپ کے نوٹس چاہیں ۔ بس ایک دن کے لیے لے آٸیں میں فوٹوکاپی کروا لوں گی”۔ عاٸزہ نے گذارش کے سے انداز میں کہا۔
“میں آپ کو اپنا نمبر دیتی ہوں۔ مجھے یاد کروا دیں تو میں لے آٶں گی”۔ عاٸشہ نے نرمی سے کہا ۔
“بہت بہت شکریہ” ۔ عاٸزہ نے کہا اور خوشی خوشی لوٹ گٸی ۔
“ایک تو تم عاٸشہ ۔۔ہر ایک کی مدد کرنے پر ہر وقت تلی رہتی ہو۔کوٸی پوچھے اس عاٸزہ کو کوٸی اور نہیں ملا تھا نوٹس لینے کے لیے”……  ارسہ تلملا کر بولی۔
“کوٸی فرق نہیں پڑتا ارسہ ۔۔نوٹس ہی تو دینا ہیں ۔دے دوں گی۔” عاٸشہ کو ہر ایک کی مدد کرنے کی عادت تھی اور وہ کبھی یہ نہیں دیکھا کرتی تھی کہ مدد مانگی کس نے ہے۔
  عاٸزہ اکثر و بیشتر اب میسج کرنے لگی تھی ۔ حمزہ بھی کبھی کبھار اسے جواب دے دیاکرتا تھا۔
“حمزہ کی تو میرے ساتھ بہت دوستی ہے” ۔ عاٸزہ کو ہر بات بڑھا چڑھا کر بتانے کی عادت تھی۔ عاٸزہ کی بات ارسہ نے بھی سنی ۔
“کہا تھا تمھیں کہ عاٸزہ کو اپنا نمبرنہ دو ۔۔تمھیں پتہ ہے کیا کہتی پھر رہی ہے وہ پورے کالج میں” ۔ ارسہ دندناتی ہوٸی عاٸشہ کے پاس آٸی اور غصے سے بولی ۔
“کیا ہوا ۔۔کیوں اتنا غصہ کر رہی ہو” ۔۔عاٸشہ پورے واقعہ سے لا علم تھی۔ حیرانی سے ارسہ کی طرف دیکھتے ہوۓ بولی ۔
“حمزہ اور عاٸزہ کی دوستی کے چرچے پورے کالج میں ہو رہے ہیں”۔ ارسہ نے غصے سے کہا ۔
سبھی جانتے تھے کہ عاٸزہ دل پھینک لڑکی تھی آۓ دن اس کی دوستیوں کے قصے کالج میں سننے کو ملتے تھے ۔
“یہ کیسے ہو سکتا ہے ۔۔حمزہ ایسا نہیں ہے”….. عاٸشہ نے بے یقینی سے کہا ۔
“یہ ہوا ہے عاٸشہ۔تم نے اپنا فون نمبر عاٸزہ کو دیا اور فون حمزہ کے پاس ہوتا ہے ۔ ان کی آپس میں بات ہوتی ہے” ۔ارسہ نےتفصیل بتاٸی۔
“اف میرے خدا! ۔۔۔اس عاٸزہ نے تو پورے کالج کو بتا دیا ہو گا” ۔ عاٸشہ نے پریشانی سے کہا ۔
“جی ہاں! ۔۔پورے کالج میں چہ مگویاں ہو رہی ہیں۔ ارسہ نے چہ مگویاں پر زور دیتے ہوۓ کہا



…………………………………………………………………………………………….

حالات کبھی ایک سے نہیں رہتے ۔محنت انسان کو کہاں سے کہاں لے جاتی ہے ۔ اسجد صاحب کی چھوٹی سی دکان تھی جس پر شام کے وقت حمزہ بھی بیٹھنے لگا تھا ۔ دکان دن دگنی رات چگنی ترقی کرنے لگی تھی ۔ حمزہ نے کاروبار میں کٸی طرح سے جدت لاٸی تھی ۔ آج حمزہ نے گاڑی خریدی تھی اور مٹھاٸی کا ڈبہ لے کر گھر آیا تھا۔
“اماں مبارک ہو ۔۔مٹھاٸی کھاٸیں” …..۔ سبھی خوش تھے رابعہ کی خوشی کی انتہا نہ رہی تھی ۔ ان کے بیٹے کی محنت رنگ لا رہی تھی ۔
“اوے نوفل  راحیلہ ..عاٸشہ باجی آٸیں تو سب چلتے ہیں گھومنے” ۔۔۔حمزہ کے چہرے پر خوشی ہی خوشی تھی ۔
“اور میں ۔۔۔میں نہ جاٶں “۔۔رابعہ نے مسکراتے ہوۓ کہا ۔
“امی!…. آپ اور ابو سب جاٸیں گے نا”۔۔۔حمزہ نے کہا ۔
“نہیں نہیں ۔۔امی ہم ابو کو گاڑی چلانا سیکھاٸیں گے آپ اور ابو اکیلے جانا “…… نوفل نے کچھ سوچتے ہوۓ کہا ۔
“بے شرم ۔ ماں سے کیسی باتیں کررہا ہے۔” رابعہ کے چہرے پر لالی آٸی
اپنی شرم کو چھپانے کے لیے انھوں نے جوتا اٹھایا اور نوفل کی جانب اچھال دیا جسے اس نے کیچ کر لیا۔
“امی! ۔۔۔ویسے بات نوفل کی صحیح ہے ۔ اب میں تو گھمانےنہیں لے کے جا سکتا” ۔ حمزہ ہنسنے لگا ۔
“بے غیرت سارے کے سارے “۔….. رابعہ نے جھنپتے ہوۓ کہا اور کمرے سے نکل گٸی ۔
حمزہ نوفل اور راحیلہ ہنسنے لگے۔ ۔
عاٸشہ کالج سے لوٹی تو غصے کے مارے اس کا برا حال تھا ۔
“حمزہ کدھر ہے؟”…….. ۔ سب اپنے اپنے کمروں میں جا چکے تھے ۔جب عاٸشہ غصے سے چلاٸی ۔
“کیا ہوا عاٸشہ؟ …..غصے میں کیوں ہو؟ …… حمزہ گاڑی کی رجسٹریشن کروانے شہر گیا ہے ۔ رابعہ خوشی خوشی اسے بتانے لگیں۔
عاٸشہ کا غصہ کچھ کم ہو گیا۔
وہ حمزہ سے بے انتہا محبت کرتی تھی اس کے لیے حمزہ کے بارے میں کچھ بھی سننا بے حد مشکل تھا ۔
حمزہ گاڑی کی رجسٹریشن کروا کے مغرب کے وقت واپس پہنچا ۔۔
“باجی!….. مبارک ہو کل سے سب کو میں خود ڈراپ کروں گا۔ علی کو بھی کہہ دیا ہے کہ وہ آپ کی دوست کو بھی ہمارے ساتھ ہی بھیج دے”۔ حمزہ نے جوشیلے انداز میں کہا .
“حمزہ!… میرے بھاٸی”۔……. عاٸشہ نے حمزہ کا ماتھا چوما ۔
کیا ہوا?…. باجی!… خیر تو ہے ” ….حمزہ نے حیرانی سے پوچھا ۔
“خیر ہی ہے آٸیندہ تم عاٸزہ کے کسی میسج کا جواب نہ دینا”…..عاٸشہ نے مسکراتے ہوۓ کہا ۔
“ہوا کیا ہے ۔؟…… حمزہ نے پوچھا ۔
“کچھ نہیں ہوا بس یونہی کہہ رہی ہوں ۔تم آرام کرو تھک گٸے ہو گے”…۔عاٸشہ نے کہا اور اپنے کمرے کی جانب بڑھ گٸی




About admin786

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
WpCoderX