چل خواب جزیرے چلتے ہیں 

نظم

چل   خواب   جزیرے   چلتے  ہیں
جہاں پھول ہر اک سو کھلتے ہیں
جہاں رنگ  فضا میں بکھرے  ہیں
جہاں سدا سے  پیارا  موسم  ہے
جہاں  درد  نہ  کوئی  ملتے  ہیں
جہاں دشمن کوئی نہیں اپنا  ہے
جہاں   تیرِ   زباں    نہیں   چلتے
جہاں  روپ  نگر   کی  رانی  ہے
جہاں  پریم   نگر   کا  راجہ  ہے
اے سنگ  زاد  !  میرا  ساتھ  دے
چل   خواب   جزیرے   چلتے  ہیں

میمونہ صدف




1 thought on “چل خواب جزیرے چلتے ہیں 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest